سب پہ تو مہربان ہے پیارے

جگر مراد آبادی

سب پہ تو مہربان ہے پیارے

جگر مراد آبادی

MORE BYجگر مراد آبادی

    سب پہ تو مہربان ہے پیارے

    کچھ ہمارا بھی دھیان ہے پیارے

    آ کہ تجھ بن بہت دنوں سے یہ دل

    ایک سونا مکان ہے پیارے

    تو جہاں ناز سے قدم رکھ دے

    وہ زمین آسمان ہے پیارے

    مختصر ہے یہ شوق کی روداد

    ہر نفس داستان ہے پیارے

    اپنے جی میں ذرا تو کر انصاف

    کب سے نامہربان ہے پیارے

    صبر ٹوٹے ہوئے دلوں کا نہ لے

    تو یوں ہی دھان پان ہے پیارے

    ہم سے جو ہو سکا سو کر گزرے

    اب ترا امتحان ہے پیارے

    مجھ میں تجھ میں تو کوئی فرق نہیں

    عشق کیوں درمیان ہے پیارے

    کیا کہے حال دل غریب جگرؔ

    ٹوٹی پھوٹی زبان ہے پیارے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY