صدیوں کا کرب لمحوں کے دل میں بسا دیا

بلراج حیات

صدیوں کا کرب لمحوں کے دل میں بسا دیا

بلراج حیات

MORE BYبلراج حیات

    صدیوں کا کرب لمحوں کے دل میں بسا دیا

    پل بھر کی زندگی کو دوامی بنا دیا

    دیوار میں وہ چن ہی رہا تھا مجھے مگر

    کم بخت ایک سنگ کہیں مسکرا دیا

    جب اور کوئی مد مقابل نہیں رہا

    میری انا نے مجھ کو مجھی سے لڑا دیا

    مجھ سے نہ پوچھ کل کے محقق سے پوچھنا

    شعلوں کے لمس نے مجھے کیوں یخ بنا دیا

    یادوں کے شہر میں بھی نہ حیرتؔ سکوں ملا

    حالات نے مزاج کچھ ایسا بنا دیا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY