سحر قریب ہے خلوت مہک رہی ہوگی

حیات وارثی

سحر قریب ہے خلوت مہک رہی ہوگی

حیات وارثی

MORE BYحیات وارثی

    سحر قریب ہے خلوت مہک رہی ہوگی

    شراب ساغر غم سے چھلک رہی ہوگی

    وہ بات ترک تعلق کا جو سبب ٹھہری

    وہ بات ترک تعلق کا جو سبب ٹھہری

    وہ بات خود ترے دل میں کھٹک رہی ہوگی

    یہ اجلی شام مہکتے ہوئے یہ سناٹے

    وہ اپنے منہ کو دوپٹے سے ڈھک رہی ہوگی

    میں صبح و شام گزرتا تھا جس سے بے مقصد

    وہ راہ اب بھی مری راہ تک رہی ہوگی

    قلم ہے صدیوں سے مصروف حسن کاری میں

    سحر میں تیری ادا بھی جھلک رہی ہوگی

    یہ بات الگ ہے میں راہوں کی جستجو میں ہوں

    مری تلاش میں منزل بھٹک رہی ہوگی

    حیاتؔ پھر مہک اٹھی ہے یاد ماضی کی

    ہمارے گاؤں میں پھر فصل پک رہی ہوگی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے