سمجھ سکا نہ کوئی راز حسن بیگانہ

جمیل الدین عالی

سمجھ سکا نہ کوئی راز حسن بیگانہ

جمیل الدین عالی

MORE BYجمیل الدین عالی

    سمجھ سکا نہ کوئی راز حسن بیگانہ

    جز ایں نیاز پسندئ‌ قلب دیوانہ

    یہ چاندنی یہ فضا یہ ہوائے مے خانہ

    دوام ہو تو ملے مجھ کو ایک پیمانہ

    تری نگاہ کی توصیف ہو رہی ہے مگر

    مری ہی تشنہ لبی بھر رہی ہے پیمانہ

    جہاں پہنچ نہ سکا کوئی جذبۂ محتاط

    وہاں گیا ہے مرا ذوق سرفروشانہ

    نہیں ہے سرمد و منصور پر ہی ختم جنوں

    مجھے بھی لوگوں نے اکثر کہا ہے دیوانہ

    شکایت غم دل کو زباں نہیں کھلتی

    کہ اس نگاہ کے انداز ہیں کریمانہ

    تمام بزم میں اک ہم خموش بیٹھے ہیں

    سنا رہے ہیں سبھی تجھ کو تیرا افسانہ

    یقین رکھ کہ تری انجمن سے ہم بھی کبھی

    تری ہی طرح سے گزریں گے بے نیازانہ

    گزارنی ہے شب غم کسی طرح اے دوست

    نہ اپنی کوئی کہانی نہ کوئی افسانہ

    نہ پوچھ مجھ سے کسی شے کی اصل اے ہمدم

    کہ دیکھتا ہوں میں آبادیوں میں ویرانہ

    عجب عتاب مشیت ہے مجھ پہ اے عالیؔ

    گدا بنا کے دیا ہے مزاج شاہانہ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY