سواد شام غم میں یوں تو دیر تک جلا چراغ

ناظر صدیقی

سواد شام غم میں یوں تو دیر تک جلا چراغ

ناظر صدیقی

MORE BYناظر صدیقی

    سواد شام غم میں یوں تو دیر تک جلا چراغ

    نہ جانے کیوں تھکا تھکا اداس اداس تھا چراغ

    پھر اس کے بعد عمر بھر یہ جستجو رہی مجھے

    کہ ایک شب گزار کے کہاں چلا گیا چراغ

    وہ کب سے تھا وہ کون تھا کوئی تو میرے ساتھ تھا

    مرے سفر میں یک بہ یک کہاں سے آ گیا چراغ

    بجھا سکے تو اب تجھے مری صلائے عام ہے

    فصیل جاں پہ اے ہوا جلا کے رکھ دیا چراغ

    میں خوگر ستم بھی ہوں ادا شناس غم بھی ہوں

    مجال کیا ہوائے غم بجھا سکے مرا چراغ

    وجود غم بچا لیا یہ بات کوئی کم نہیں

    ہوائے غم کے سامنے لرز کے رہ گیا چراغ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY