شام کجلائی ہوئی رات ابھاگن جیسی

عشرت قادری

شام کجلائی ہوئی رات ابھاگن جیسی

عشرت قادری

MORE BYعشرت قادری

    شام کجلائی ہوئی رات ابھاگن جیسی

    رت نہیں آتی کسی گاؤں میں ساون جیسی

    رنگ ٹیسو میں کھلے ہیں تری چنری کی طرح

    بن میں پھولوں کی مہک ہے ترے آنگن جیسی

    اس کی آواز میں ہے سات سروں کا سنگیت

    بات بھی وہ کرے تو بجتی ہے جھانجھن جیسی

    رات کی ویشیا لاکھ آنکھوں میں کاجل پارے

    صبح مانگ اپنی سجائے گی سہاگن جیسی

    ایک پل بچھڑیں تو لگتا ہے یگوں کا بن باس

    اور جب تک نہ ملیں رہتی ہے الجھن جیسی

    تو الگ روٹھی ہوئی ہے وہ الگ روٹھا ہوا

    گوری کس بات پہ ساجن سے ہے ان بن جیسی

    آنچ سی لگتی ہے پہلو میں تری سانسوں کی

    گھاؤ پر ٹھنڈی ہوا ہے ترے دامن جیسی

    مری آنکھوں میں دل آویز سماں ہے عشرتؔ

    پھولوں پر اوس کی ہر بوند ہے درپن جیسی

    مآخذ:

    • کتاب : Aasman Saiyban (Poetry) (Pg. 54)
    • Author : Ishrat Qadri
    • مطبع : Madhya Pradesh Urdu Academy, Bhopal (2010)
    • اشاعت : 2010

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY