شام کے مسکن میں ویراں میکدے کا در کھلا

منیر نیازی

شام کے مسکن میں ویراں میکدے کا در کھلا

منیر نیازی

MORE BY منیر نیازی

    شام کے مسکن میں ویراں میکدے کا در کھلا

    باب گزری صحبتوں کا خواب کے اندر کھلا

    کچھ نہ تھا جز خواب وحشت وہ وفا اس عہد کی

    راز اتنی دیر کا اس عمر میں آ کر کھلا

    بن میں سرگوشی ہوئی آثار ابر و باد سے

    بند غم سے جیسے اک اشجار کا لشکر کھلا

    جگمگا اٹھا اندھیرے میں مری آہٹ سے وہ

    یہ عجب اس بت کا میری آنکھ پر جوہر کھلا

    سبزۂ نورستہ کی خوشبو تھی ساحل پر منیرؔ

    بادلوں کا رنگ چھتری کی طرح سر پر کھلا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites