شب غم یاد ان کی آ رہی ہے

ظہیر کاشمیری

شب غم یاد ان کی آ رہی ہے

ظہیر کاشمیری

MORE BYظہیر کاشمیری

    شب غم یاد ان کی آ رہی ہے

    چراغ دل کی لو تھرا رہی ہے

    بیان دوست ناصح کی زباں سے

    طبیعت اور مچلی جا رہی ہے

    کہاں نقش کف پا ڈھونڈتے ہو

    صدائے پا تو دل سے آ رہی ہے

    بڑے دلکش ہیں دنیا کے خم و پیچ

    نظر میں زلف سی لہرا رہی ہے

    ہوئی مدت کہ دل آتش زدہ تھا

    فغاں سے آج تک آنچ آ رہی ہے

    شب وعدہ خیالوں کے افق پر

    گریزاں سی ضیا تھرا رہی ہے

    محبت کو کہاں تاب نظارہ

    جوانی آپ ہی شرما رہی ہے

    سکوت شام کی پہنائیوں سے

    صدا اس اجنبی کی آ رہی ہے

    مآخذ
    • کتاب : kulliyat-e-zahiir (Pg. 186)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY