شب وعدہ کہہ گئی ہے شب غم دراز رکھنا

شاذ تمکنت

شب وعدہ کہہ گئی ہے شب غم دراز رکھنا

شاذ تمکنت

MORE BYشاذ تمکنت

    شب وعدہ کہہ گئی ہے شب غم دراز رکھنا

    اسے میں بھی راز رکھوں اسے تم بھی راز رکھنا

    یہ ہے خار خار وادی یوں ہی زخم زخم چلنا

    یہ ہے پتھروں کی بستی یوں ہی دل گداز رکھنا

    ہمہ تن جنوں ہوں پھر بھی رہے کچھ تو پردہ داری

    کہ برا نہیں خرد سے کوئی ساز باز رکھنا

    مرے ناخن‌ وفا پر کوئی قرض رہ نہ جائے

    ترے دل میں جو گرہ ہے اسے نیم باز رکھنا

    وہی لے جو ان سنی بھی وہی شاذؔ نغمگی بھی

    یہ حساب خامشی بھی مرے نے نواز رکھنا

    مأخذ :
    • کتاب : siip (Magzin) (Pg. 230)
    • Author : Nasiim Durraani
    • مطبع : Fikr-e-Nau (39 (Quarterly))
    • اشاعت : 39 (Quarterly)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY