شب ذرا دیر سے گزرے گی نہ گھبرا اے دل

رضی رضی الدین

شب ذرا دیر سے گزرے گی نہ گھبرا اے دل

رضی رضی الدین

MORE BYرضی رضی الدین

    شب ذرا دیر سے گزرے گی نہ گھبرا اے دل

    صبح خود ہوگی نمودار ٹھہر جا اے دل

    کھو گئی گیسوئے جاناں کہ گھنی چھاؤں کہاں

    ہر طرف دھوپ کا تپتا ہوا صحرا اے دل

    کوچۂ یار میں آئے تھے کن امیدوں سے

    لٹ گئی آ کے یہاں شوق کی دنیا اے دل

    کیسی شورش سی بپا ہے کبھی چل کر دیکھیں

    قتل گاہوں میں ہے یہ کیسا تماشا اے دل

    موسم گل ہے یہ کیسا کہ چمن حیراں ہے

    ہر کلی پھول کا دل جیسے کہ میرا اے دل

    دشمن جاں ہیں سبھی سارے کے سارے قاتل

    تو بھی اس بھیڑ میں کچھ دیر ٹھہر جا اے دل

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے