شہر گم صم راستے سنسان گھر خاموش ہیں

اظہرنقوی

شہر گم صم راستے سنسان گھر خاموش ہیں

اظہرنقوی

MORE BYاظہرنقوی

    شہر گم صم راستے سنسان گھر خاموش ہیں

    کیا بلا اتری ہے کیوں دیوار و در خاموش ہیں

    وہ کھلیں تو ہم سے راز دشت وحشت کچھ کھلے

    لوٹ کر کچھ لوگ آئے ہیں مگر خاموش ہیں

    ہو گیا غرقاب سورج اور پھر اب اس کے بعد

    ساحلوں پر ریت اڑتی ہے بھنور خاموش ہیں

    منزلوں کے خواب دے کر ہم یہاں لائے گئے

    اب یہاں تک آ گئے تو راہبر خاموش ہیں

    دکھ سفر کا ہے کہ اپنوں سے بچھڑ جانے کا غم

    کیا سبب ہے وقت رخصت ہم سفر خاموش ہیں

    کل شجر کی گفتگو سنتے تھے اور حیرت میں تھے

    اب پرندے بولتے ہیں اور شجر خاموش ہیں

    جب سے اظہرؔ خال و خد کی بات لوگوں میں چلی

    آئنے چپ چاپ ہیں آئینہ گر خاموش ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY