aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

شہر میں جب بھی زلیخا سے خریدار آئے

سرشار صدیقی

شہر میں جب بھی زلیخا سے خریدار آئے

سرشار صدیقی

MORE BYسرشار صدیقی

    شہر میں جب بھی زلیخا سے خریدار آئے

    کتنے یوسف تھے کہ خود ہی سر بازار آئے

    چھیڑ دی قامت و گیسو کی حکایت ہم نے

    کسی صورت سے تو ذکر رسن و دار آئے

    جب بھی زنداں میں اسیروں کو ملا مژدۂ گل

    میری نظروں میں تمہارے لب و رخسار آئے

    دوسری راہ وفا میں کوئی منزل ہی نہ تھی

    جو تری بزم سے اٹھے وہ سر دار آئے

    جب کیا ترک تمنا کا ارادہ ہم نے

    سامنے کتنے ہی ٹوٹے ہوئے پندار آئے

    ہوش مندوں نے سجا لی غم دل کی محفل

    ہم سے دیوانے سر انجمن دار آئے

    ہم سے سیکھے کوئی آداب قدح نوشی کے

    ہم کہ میخانے میں غافل گئے ہشیار آئے

    غور سے دیکھ سخن فہموں کے چہرے سرشارؔ

    کتنے اس شکل میں غالبؔ کے طرفدار آئے

    مأخذ:

    Patthar Ki Lakiir II (Pg. 43)

    • مصنف: Sarshar Siddiqui
      • اشاعت: 1982
      • سن اشاعت: 1982

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے