شرار عشق صدیوں کا سفر کرتا ہوا

کبیر اجمل

شرار عشق صدیوں کا سفر کرتا ہوا

کبیر اجمل

MORE BYکبیر اجمل

    شرار عشق صدیوں کا سفر کرتا ہوا

    بجھا مجھ میں مجھی کو بے خبر کرتا ہوا

    رموز خاک باب مشتہر کرتا ہوا

    یوں ہی آباد صحرائے ہنر کرتا ہوا

    زمین جستجو گرد سفر کرتا ہوا

    یہ مجھ میں کون ہے مجھ سے مفر کرتا ہوا

    ابھی تک لہلہاتا ہے وہ سبزہ آنکھ میں

    وہ موج گل کو معیار نظر کرتا ہوا

    حریم شب میں خوں روتا ہوا ماہ تمام

    نگار صبح قصہ مختصر کرتا ہوا

    مری مٹی کو لے پہنچا دیار یار تک

    غبار جاں طواف چشم تر کرتا ہوا

    تکبر لے رہا ہے امتحاں پھر عزم کا

    ستاروں کو مرے زیر اثر کرتا ہوا

    فلک بوسی کی خواہش طائر وحشت کو تھی

    اڑا ہے اپنی مٹی درگزر کرتا ہوا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے