شرمندہ کیا جوہر بالغ نظری نے

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

شرمندہ کیا جوہر بالغ نظری نے

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

MORE BYوحشتؔ رضا علی کلکتوی

    شرمندہ کیا جوہر بالغ نظری نے

    اس جنس کو بازار میں پوچھا نہ کسی نے

    صد شکر کسی کا نہیں محتاج کرم میں

    احسان کیا ہے تری بیداد گری نے

    محتاج تھی آئینے کی تصویر سی صورت

    تصویر بنایا مجھے محفل میں کسی نے

    گل ہنستے ہیں غنچے بھی ہیں لبریز تبسم

    کیا ان سے کہا جا کے نسیم سحری نے

    مایوس نہ کر دے کہیں ان کی نگہ گرم

    امید دلائی ہے مجھے سادہ دلی نے

    محنت ہی پہ موقوف ہے آسائش گیتی

    کھوئی مری راحت مری راحت طلبی نے

    وحشتؔ میں نگاہوں کے تجسس سے ہوں آزاد

    احسان کیا مجھ پہ مری بے ہنری نے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    شرمندہ کیا جوہر بالغ نظری نے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY