شوق نے عشرت کا ساماں کر دیا

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

شوق نے عشرت کا ساماں کر دیا

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

MORE BYوحشتؔ رضا علی کلکتوی

    شوق نے عشرت کا ساماں کر دیا

    دل کو محو روئے جاناں کر دیا

    تو نے اے جمعیت دل کی ہوس

    اور بھی مجھ کو پریشاں کر دیا

    واہ رے زخم محبت کی خلش

    جس کو دل نے راحت جاں کر دیا

    خود نمائی خود فروشی ہو گئی

    آپ نے اپنے کو ارزاں کر دیا

    ان کے دامن تک نہ پہنچا دست شوق

    اس کو مصروف گریباں کر دیا

    بزم میں جب غیر پر ڈالی نظر

    آپ نے مجھ پر بھی احساں کر دیا

    کچھ بڑھا کر میں نے بہر شرح غم

    چاک کو عنوان داماں کر دیا

    جھک گئی آخر حیا سے ان کی آنکھ

    شوق نے مجھ کو پشیماں کر دیا

    پائے بت پر میں نے دو سجدے کئے

    کفر کو بھی جزو ایماں کر دیا

    اسے خیال لیلیٰ مجنوں نواز

    تو نے صحرا کو گلستاں کر دیا

    ہو کے زائل قوت احساس نے

    مشکلوں کو میری آساں کر دیا

    دل نہیں جاتا تھا سوئے راہ دیر

    کیسے کافر کو مسلماں کر دیا

    تو نے وحشتؔ کیوں خلاف رسم عشق

    درد کو رسوائے درماں کر دیا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY