شکوۂ بے جا کی کیا ان سے شکایت ہم کریں

محمد دین تاثیر

شکوۂ بے جا کی کیا ان سے شکایت ہم کریں

محمد دین تاثیر

MORE BYمحمد دین تاثیر

    شکوۂ بے جا کی کیا ان سے شکایت ہم کریں

    کچھ تو ہیں پہلے ہی برہم اور کیا برہم کریں

    وہ توجہ دیں تو ہو آراستہ بزم حیات

    وہ نگاہیں پھیر لیں تو انجمن برہم کریں

    یوں بدل لیں طالع خورشید سے بخت سیاہ

    آسماں کی طرح سر کو تیرے در پر خم کریں

    آئنہ دار نمود حسن روز افزوں جو ہو

    ہم کہاں سے روز پیدا اک نیا عالم کریں

    آگہی سر چشمۂ رنج و الم تاثیرؔ ہے

    ہم خوشی سے ہی نہیں واقف تو پھر کیا غم کریں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY