شورش سے چشم تر کی زبس غرق آب ہوں

ولی اللہ محب

شورش سے چشم تر کی زبس غرق آب ہوں

ولی اللہ محب

MORE BYولی اللہ محب

    شورش سے چشم تر کی زبس غرق آب ہوں

    دن رات بحر غم میں برنگ حباب ہوں

    یہ دور اب تو ہے کہ رقیبوں کی بزم میں

    تو مست ہو شراب سے اور میں کباب ہوں

    مجھ خوں گرفتہ پر مرے قاتل کمر نہ باندھ

    میں آپ اپنے قتل کا خواہاں شتاب ہوں

    ہر صبح و شام باغ میں صحرا میں جوں نسیم

    اس گل کی جستجو کی ہوس پر خراب ہوں

    حیرت سے اس کو دیکھتے ہیں مثل آئنہ

    افشائے درد دل سے کھڑا بے جواب ہوں

    آگاہ ہے خدا ہی محبؔ روز کس لئے

    نظروں میں ان بتاں کی محل عتاب ہوں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے