ستارے منتظر ہیں ساز کہکشاں لئے ہوئے

شہاب سرمدی

ستارے منتظر ہیں ساز کہکشاں لئے ہوئے

شہاب سرمدی

MORE BYشہاب سرمدی

    ستارے منتظر ہیں ساز کہکشاں لئے ہوئے

    زمیں کا چاند اٹھ رہا ہے آسماں لئے ہوئے

    جو دن ڈھلا ہوا رکی کچھ ایسی شام غم جھکی

    چراغ زندگی کی لو اٹھی دھواں لئے ہوئے

    کٹھن اگر ڈگر میں مرحلے تو تیز تر ہوں ولولے

    چلو نہ اس طرح متاع سرگراں لئے ہوئے

    نہ شاخ گل نہ آشیاں مگر کریں گے خستہ جاں

    طواف بوستاں ہزار داستاں لئے ہوئے

    نہیں کہ زندگی ہمیں کہاں کہاں لئے پھری

    ہے یوں کہ ہم گئے اسے کہاں کہاں لئے ہوئے

    یہ ساز تلخیٔ زماں ہزار نغمہ بر زباں

    یہ یاد مہر گل رخاں غم جہاں لئے ہوئے

    بہ فیض شام میکدہ نظر کو نور ساقیا

    افق پہ چھا گئی گھٹا سیاہیاں لئے ہوئے

    یہ اپنا اپنا ساتھ ہے سفر سفر کی بات ہے

    کہیں پہ ہم بھی آ ملیں گے کارواں لئے ہوئے

    لہک لہک کے ناصحا بشارت ارم نہ دے

    کہ ہم وہاں بھی رہ چکے ہیں جسم و جاں لئے ہوئے

    حریف مدعی سہی مگر وہی شہابؔ ہوں

    جو اب تک ہے مزاج دوستاں لئے ہوئے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY