ستم کو ان کا کرم کہیں ہم جفا کو مہر و وفا کہیں ہم

آتش بہاولپوری

ستم کو ان کا کرم کہیں ہم جفا کو مہر و وفا کہیں ہم

آتش بہاولپوری

MORE BYآتش بہاولپوری

    ستم کو ان کا کرم کہیں ہم جفا کو مہر و وفا کہیں ہم

    زمانہ اس بات پر بضد ہے کہ ناروا کو روا کہیں ہم

    کچھ ایسا سودا ہے سب کے سر میں مزاج بگڑے ہوئے ہیں سب کے

    کوئی بھی سنتا نہیں کسی کی کہیں کسی سے تو کیا کہیں ہم

    یہ ساری باتیں ہیں درحقیقت ہمارے اخلاق کے منافی

    سنیں برائی نہ ہم کسی کی نہ خود کسی کو برا کہیں ہم

    نہ جانے ہم سے ہے کیا توقع؟ نہیں کسی طرح جان بخشی

    زمانہ اس پہ بھی معترض ہے اگر خدا کو خدا کہیں ہم

    ہماری آہیں بھی بے اثر ہیں ہمارے نالے بھی نارسا ہیں

    وہ درد جس کا نہ ہو مداوا اسے نہ کیوں لا دوا کہیں ہم

    نہ دن کو ہے کچھ سکوں میسر نہ شب کو آتی ہے نیند ہم کو

    یہی محبت کی ابتدا ہے تو پھر کسے انتہا کہیں ہم

    یہی تقاضا ہے مصلحت کا اسی میں ہے عافیت بھی آتشؔ

    کسی سے دل کو جو رنج پہنچے اسے خدا کی رضا کہیں ہم

    مأخذ :
    • کتاب : Jada-e-manzil (Pg. 65)
    • Author : Atish Bahawalpuri
    • مطبع : Nirali Duniya Publications (2001)
    • اشاعت : 2001

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY