ستم تیر نگاہ دل ربا تھا

ہجر ناظم علی خان

ستم تیر نگاہ دل ربا تھا

ہجر ناظم علی خان

MORE BYہجر ناظم علی خان

    ستم تیر نگاہ دل ربا تھا

    ہمارے حق میں پیغام قضا تھا

    ہوا اچھا کہ وہ گھر سے نہ نکلے

    کسے معلوم کس کے دل میں کیا تھا

    مجھے وہ یاد کرتے ہیں یہ کہہ کر

    خدا بخشے نہایت باوفا تھا

    امید وصل کی حالت نہ پوچھو

    فقط اک آسرا ہی آسرا تھا

    بہت اچھا ہوا وہ لے گئے دل

    بڑا ضدی نہایت بے وفا تھا

    نہیں معلوم اس کمسن کو یہ بھی

    ہمارے دل میں کیا ہے اور کیا تھا

    نہ پوچھو جلوہ گاہ ناز کا جمال

    ہر اک محو جمال دل ربا تھا

    سنا ہے مےکشی کرنے لگا ہجرؔ

    وہ مرد باخدا تو پارسا تھا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY