صبح بہار و شام خزاں کچھ نہ کچھ تو ہو

تاب اسلم

صبح بہار و شام خزاں کچھ نہ کچھ تو ہو

تاب اسلم

MORE BYتاب اسلم

    صبح بہار و شام خزاں کچھ نہ کچھ تو ہو

    بے نام زندگی کا نشاں کچھ نہ کچھ تو ہو

    خاموشیوں کی آگ میں جلتا ہے مے کدہ

    دل دادگان شعلہ رخاں کچھ نہ کچھ تو ہو

    جینے کے واسطے کوئی صورت تو چاہیے

    ہو شمع انجمن کہ دھواں کچھ نہ کچھ تو ہو

    چپ چپ ہے موج اور کنارے اداس ہیں

    اے زندگی کے سیل رواں کچھ نہ کچھ تو ہو

    صبح ازل کا روپ کہ شام ابد کا گیت

    سایہ ہو دھوپ ہو کہ گماں کچھ نہ کچھ تو ہو

    ساقی نئے چراغ مبارک تجھے مگر

    جو بجھ چکے ہیں ان کا بیاں کچھ نہ کچھ تو ہو

    کوئی حسین گیت کوئی رس بھری غزل

    یارو علاج غم زدگاں کچھ نہ کچھ تو ہو

    مانا کہ تابؔ یوں بھی گزر جائے گی مگر

    ذکر جمال گل بدناں کچھ نہ کچھ تو ہو

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے