سکوں تلاش نہ کر آرزو کے دیوانے

شہاب سرمدی

سکوں تلاش نہ کر آرزو کے دیوانے

شہاب سرمدی

MORE BYشہاب سرمدی

    سکوں تلاش نہ کر آرزو کے دیوانے

    جو زندگی نے دیا ہے وہ زندگی جانے

    اس اہتمام سے اکثر اٹھے ہیں پیمانے

    کہ بوند بوند کو میں جانوں یا خدا جانے

    دکھے ہوئے دل آدم میں ہے امید کی دھوم

    ہیں ایک بات سے پیدا ہزار افسانے

    چراغ رہ سے غرض ہے نہ نقش پا کی تلاش

    یہ رہروی کوئی ناکردہ راہ کیا جانے

    کدھر کو رخ کرے یا رب مرا مذاق سجود

    کہ آج قبلۂ دل کعبہ ہے نہ بت خانے

    میں انتہائے مسرت کو زندگی کر دوں

    اگر نظام تمنا مرا کہا مانے

    سنبھل اے ہوش ذرا کل کی فکر کر ساقی

    چھلک نہ جائیں کہیں بھر چکے ہیں پیمانے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY