صورت سحر جاؤں اور در بدر جاؤں

اعجاز گل

صورت سحر جاؤں اور در بدر جاؤں

اعجاز گل

MORE BYاعجاز گل

    صورت سحر جاؤں اور در بدر جاؤں

    اب تو فیصلہ ٹھہرا رات سے گزر جاؤں

    واہموں کے زنداں کا ذہن ذہن قیدی ہے

    بول فکر تابندہ میں کدھر کدھر جاؤں

    میری نارسائی سے قافلہ نہ رک جائے

    میں کہ پا شکستہ ہوں راستے میں مر جاؤں

    عشق کی صداقت پر جبکہ میرا ایماں ہے

    کیسے خودکشی کر لوں کیوں بکھر بکھر جاؤں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY