تابش حسن حجاب رخ پر نور نہیں

برق دہلوی

تابش حسن حجاب رخ پر نور نہیں

برق دہلوی

MORE BYبرق دہلوی

    تابش حسن حجاب رخ پر نور نہیں

    رخنہ گر ہو نگہ شوق تو کچھ دور نہیں

    شب فرقت نظر آتے نہیں آثار سحر

    اتنی ظلمت ہے رخ شمع پہ بھی نور نہیں

    راز سربستۂ فطرت نہ کھلا ہے نہ کھلے

    میں ہوں اس سعی میں مصروف جو مشکور نہیں

    صرف نیرنگئ نظارہ ہے خود اپنا وجود

    عین وحدت ہے کوئی ناظر و منظور نہیں

    نظر آتا نہیں گو منزل مقصد کا نشاں

    ذوق صادق یہی کہتا ہے کہ کچھ دور نہیں

    مأخذ :
    • کتاب : Mujalla Dastavez (Pg. 113)
    • Author : Aziz Nabeel
    • مطبع : Edarah Dastavez (2013-14)
    • اشاعت : 2013-14

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY