تخت جس بے خانماں کا دشت ویرانی ہوا

ولی محمد ولی

تخت جس بے خانماں کا دشت ویرانی ہوا

ولی محمد ولی

MORE BYولی محمد ولی

    تخت جس بے خانماں کا دشت ویرانی ہوا

    سر اپر اس کے بگولا تاج سلطانی ہوا

    کیوں نہ صافی اس کوں حاصل ہو جو مثل آرسی

    اپنے جوہر کی حیا سوں سر بسر پانی ہوا

    زندگی ہے جس کوں دائم عالم باقی منیں

    جلوہ گر کب اس انگے یو عالم فانی ہوا

    بیکسی کے حال میں یک آن میں تنہا نہیں

    غم ترا سینے میں میرے ہمدم جانی ہوا

    اے ولیؔ غیرت سوں سورج کیوں جلے نئیں رات دن

    جگ منیں وو ماہ رشک ماہ کنعانی ہوا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY