تسکیں کو ہم نہ روئیں جو ذوق نظر ملے

مرزا غالب

تسکیں کو ہم نہ روئیں جو ذوق نظر ملے

مرزا غالب

MORE BYمرزا غالب

    تسکیں کو ہم نہ روئیں جو ذوق نظر ملے

    حوران خلد میں تری صورت مگر ملے

    اپنی گلی میں مجھ کو نہ کر دفن بعد قتل

    میرے پتے سے خلق کو کیوں تیرا گھر ملے

    ساقی گری کی شرم کرو آج ورنہ ہم

    ہر شب پیا ہی کرتے ہیں مے جس قدر ملے

    تجھ سے تو کچھ کلام نہیں لیکن اے ندیم

    میرا سلام کہیو اگر نامہ بر ملے

    تم کو بھی ہم دکھائیں کہ مجنوں نے کیا کیا

    فرصت کشاکش غم پنہاں سے گر ملے

    لازم نہیں کہ خضر کی ہم پیروی کریں

    جانا کہ اک بزرگ ہمیں ہم سفر ملے

    اے ساکنان کوچۂ دل دار دیکھنا

    تم کو کہیں جو غالبؔ آشفتہ سر ملے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    راحت فتح علی

    راحت فتح علی

    اقبال بانو

    اقبال بانو

    نور جہاں

    نور جہاں

    استاد برکت علی خان

    استاد برکت علی خان

    بیگم اختر

    بیگم اختر

    RECITATIONS

    اقبال بانو

    اقبال بانو

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    اقبال بانو

    تسکیں کو ہم نہ روئیں جو ذوق نظر ملے اقبال بانو

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY