تھکنا بھی لازمی تھا کچھ کام کرتے کرتے

ظفر اقبال

تھکنا بھی لازمی تھا کچھ کام کرتے کرتے

ظفر اقبال

MORE BYظفر اقبال

    تھکنا بھی لازمی تھا کچھ کام کرتے کرتے

    کچھ اور تھک گیا ہوں آرام کرتے کرتے

    اندر سب آ گیا ہے باہر کا بھی اندھیرا

    خود رات ہو گیا ہوں میں شام کرتے کرتے

    یہ عمر تھی ہی ایسی جیسی گزار دی ہے

    بدنام ہوتے ہوتے بدنام کرتے کرتے

    پھنستا نہیں پرندہ ہے بھی اسی فضا میں

    تنگ آ گیا ہوں دل کو یوں دام کرتے کرتے

    کچھ بے خبر نہیں تھے جو جانتے ہیں مجھ کو

    میں کوچ کر رہا تھا بسرام کرتے کرتے

    سر سے گزر گیا ہے پانی تو زور کرتا

    سب روک رکتے رکتے سب تھام کرتے کرتے

    کس کے طواف میں تھے اور یہ دن آ گئے ہیں

    کیا خاک تھی کہ جس کو احرام کرتے کرتے

    جس موڑ سے چلے تھے پہنچے ہیں پھر وہیں پر

    اک رائیگاں سفر کو انجام کرتے کرتے

    آخر ظفرؔ ہوا ہوں منظر سے خود ہی غائب

    اسلوب خاص اپنا میں عام کرتے کرتے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY