ترا خیال اگر جزو زندگی نہ رہے

محمود غزنی

ترا خیال اگر جزو زندگی نہ رہے

محمود غزنی

MORE BYمحمود غزنی

    ترا خیال اگر جزو زندگی نہ رہے

    جہاں میں میرے لیے کوئی دل کشی نہ رہے

    میں آ گیا ہوں وہاں تک تری تمنا میں

    جہاں سے کوئی بھی امکان واپسی نہ رہے

    تو ٹھیک کہتا ہے اے دوست ٹھیک کہتا ہے

    کہ ہم ہی قابل تجدید دوستی نہ رہے

    حضور یاد ہے میدان حشر کا وعدہ

    کہیں وہاں بھی مری آنکھ ڈھونڈھتی نہ رہے

    مرا تو خیر ازل ہی سے غم مقدر ہے

    تری نگاہ کی پہچان بے رخی نہ رہے

    تو اس طرح سے لپٹ جا چراغ کی لو سے

    کہ بعد مرگ یہاں تیری راکھ بھی نہ رہے

    کسی کے ہجر کا موسم عذاب ہے غزنیؔ

    کبھی کبھی تو میں کہتا ہوں زندگی نہ رہے

    مأخذ :
    • کتاب : Beesveen Sadi Ki Behtareen Ishqiya Ghazlen (Pg. 196)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY