ترچھی نظر سے دیکھیے تلوار چل گئی

منیرؔ  شکوہ آبادی

ترچھی نظر سے دیکھیے تلوار چل گئی

منیرؔ  شکوہ آبادی

MORE BYمنیرؔ  شکوہ آبادی

    ترچھی نظر سے دیکھیے تلوار چل گئی

    زخم جگر کی راہ سے حسرت نکل گئی

    مل دل سے وصل میں تری محرم نکل گئی

    چٹکی سے اے پری بنت انگیا کی مل گئی

    بلبل کو مست کرتی ہے خوشبو لباس کی

    شاید نسیم عطر بہار آج مل گئی

    کنگھی سے اتنی دیر میں سلجھائی ایک زلف

    اے جان آدھی رات بکھیڑے میں ڈھل گئی

    مضمون تیری زرد حنا کا نہ بندھ سکا

    منہد کی مچھلی ہاتھ میں آ کر نکل گئی

    اتنا نہ کیجئے گل رخسار پر غرور

    دو دن کی یہ بہار ہے آج آئی کل گئی

    انداز تیرے حال کی سیکھی جو رات کو

    تیغ ہلال کبک پر اے ماہ چل گئی

    سر سے ہمارے پھر گئی شمشیر برق دم

    اے جان گرتے گرتے یہ بجلی سنبھل گئی

    کیا صاف گال ہیں کہ نہ ٹھہرے نظر کہیں

    بے ساختہ نگاہ ہماری پھسل گئی

    رنگ وفا اڑا دل سخت رقیب سے

    بوتل میں یہ شراب نہ ٹھہری ابل گئی

    کیوں چشم مست ہو گئے جام شراب آج

    کیا ہو گیا جو آنکھ تمہاری بدل گئی

    مضمون گرم پر میرے طعنہ نہ کر سکے

    انگشت اعتراض حریفوں کی چل گئی

    مٹی مری خراب ہوئی راہ عشق میں

    برباد کر کے ان کی سواری نکل گئی

    مجھ سے ہی پوچھتا ہے مرا نامہ بر پتا

    ایسی فراق یار میں صورت بدل گئی

    اے شوخ تیری دست درازی سے نشہ میں

    گردوں تک آفتاب کی پگڑی اچھل گئی

    دے کر مئے دوآتشہ اس سے لپٹ گیا

    دو آنچوں میں رقیب کی کیا دال گل گئی

    جنت سے بہرہ ور ہوں ظفر گنج اے منیرؔ

    جو جو تھی آرزو مرے دل میں نکل گئی

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY