ترے آشفتہ سے کیا حال بیتابی بیاں ہوگا

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

ترے آشفتہ سے کیا حال بیتابی بیاں ہوگا

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

MORE BYوحشتؔ رضا علی کلکتوی

    ترے آشفتہ سے کیا حال بیتابی بیاں ہوگا

    جبین شوق ہوگی اور تیرا آستاں ہوگا

    زبان شمع محفل سے سنا ہے اہل محمل نے

    ترا انجام کیا پروانۂ آتش بجاں ہوگا

    تلاطم ہے امیدوں کا تصادم آرزوؤں کا

    دل ہنگامہ پرور کون تیرا راز داں ہوگا

    رہیں یوں ہی اگر رنگینیاں طرز تبسم کی

    مرے زخم جگر پر خندۂ گل کا گماں ہوگا

    تجمل سے گزر ہوگا ترے کوچے میں عاشق کا

    تمناؤں کا لشکر کارواں در کارواں ہوگا

    کبھی توفیق ترک‌ ماسوا کی ہو ہی جائے گی

    دل آزاد ہوگا اور عیش جاوداں ہوگا

    سرور افزا و مستی خیز و شورش آفریں ہوگی

    وہ بزم شعر جس میں وحشتؔ شیوا بیاں ہوگا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY