ترے مسلک میں کیا اتنا بھی سمجھایا نہیں جاتا

نواز عصیمی

ترے مسلک میں کیا اتنا بھی سمجھایا نہیں جاتا

نواز عصیمی

MORE BYنواز عصیمی

    ترے مسلک میں کیا اتنا بھی سمجھایا نہیں جاتا

    فقیروں اور درویشوں سے ٹکرایا نہیں جاتا

    نئے جملے تلاشو واقعی گر تم مقرر ہو

    ہر اک تقریر میں جملوں کو دہرایا نہیں جاتا

    تری فرقت میں سارے جسم کو پتھرا دیا میں نے

    فقط آنکھیں بچی ہیں ان کو پتھرایا نہیں جاتا

    تو اپنے عہدۂ منصف سے منصف استعفیٰ دے دے

    اگر حق دار کا حق تجھ سے دلوایا نہیں جاتا

    انا الحق کہنے والے آج بھی موجود ہیں لیکن

    انہیں اس دور میں پھانسی پے لٹکایا نہیں جاتا

    ہوا ہو تیز تو دیوار و در تھرانے لگتے ہیں

    مگر اس خوف سے گھر چھوڑ کے جایا نہیں جاتا

    بہت سے پیڑ آدم خور خصلت والے ہوتے ہیں

    نوازؔ ہر پیڑ کے سایہ میں سستایا نہیں جاتا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے