تجھے اے زاہد بدنام سمجھانا بھی آتا ہے

رضا جونپوری

تجھے اے زاہد بدنام سمجھانا بھی آتا ہے

رضا جونپوری

MORE BYرضا جونپوری

    تجھے اے زاہد بدنام سمجھانا بھی آتا ہے

    کہیں باتوں میں تیری رند میخانہ بھی آتا ہے

    متانت آفریں نظریں کرم گستر صف مژگاں

    ستم ڈھانے کو اٹھے ہو ستم ڈھانا بھی آتا ہے

    انہیں نازک لبوں کو فرصت آتش بیانی بھی

    انہیں نازک لبوں کو پھول برسانا بھی آتا ہے

    کہو بادہ کشو کیا حال ہے فیضان ساقی کا

    کبھی محفل میں دور جام و پیمانہ بھی آتا ہے

    نہیں محدود احساس تپش شمع فروزاں تک

    بلا کا سوز لے کر دل میں پروانہ بھی آتا ہے

    فنا کا درس دیتی ہیں رہ الفت میں جو موجیں

    انہیں کے پیچ و خم سے دل کو بہلانا بھی آتا ہے

    انہیں اشکوں میں احساس الم کا سیل بے پایاں

    سر مژگاں انہیں اشکوں کو تھرانا بھی آتا ہے

    تمہیں نے لب کو بخشی ہے متاع خامشی ورنہ

    زباں سے قصہ ہائے شوق دہرانا بھی آتا ہے

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY