تجھے کب پکارا نہیں جا رہا

خالد معین

تجھے کب پکارا نہیں جا رہا

خالد معین

MORE BYخالد معین

    تجھے کب پکارا نہیں جا رہا

    فراق اب سہارا نہیں جا رہا

    عجب بے کلی ہے پس عشق بھی

    یہ لمحہ گزارا نہیں جا رہا

    تحیر زدہ اک جہاں ہے مگر

    تجھی تک اشارہ نہیں جا رہا

    سر شوق منزل ہے وہ پیش و پس

    تھکن کو اتارا نہیں جا رہا

    تغیر کا ادراک ہوتے ہوئے

    نیا روپ دھارا نہیں جا رہا

    نہیں دور تک، جیت کا شائبہ

    مگر ہم سے ہارا نہیں جا رہا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY