تجھے ذرا دکھ اور سسکنے والا میں

راجیندر منچندا بانی

تجھے ذرا دکھ اور سسکنے والا میں

راجیندر منچندا بانی

MORE BYراجیندر منچندا بانی

    تجھے ذرا دکھ اور سسکنے والا میں

    تری اداسی دیکھ نہ سکنے والا میں

    ترے بدن میں چنگاری سی کیا شے ہے

    عکس ذرا سا اور چمکنے والا میں

    ترے لہو میں بیداری سی کیا شے ہے

    لمس ذرا سا اور مہکنے والا میں

    تری ادا میں پرکاری سی کیا شے ہے

    بات ذرا سی اور جھجکنے والا میں

    رنگوں کا اک باغ حسیں چہرہ تیرا

    کیا کیا دیکھوں آنکھ جھپکنے والا میں

    سنگ نہیں ہوں بات نہ مانوں موسم کی

    ہوا ذرا سی اور لچکنے والا میں

    سفر میں تنہا قدم اٹھانا مشکل ہے

    ساتھ تمہارے کبھی نہ تھکنے والا میں

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-bani (Pg. 284)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے