تم کو سوچا تیرگی میں دیر تک

پون کمار

تم کو سوچا تیرگی میں دیر تک

پون کمار

MORE BY پون کمار

    تم کو سوچا تیرگی میں دیر تک

    میں نہایا روشنی میں دیر تک

    دھوپ میں رہنا تھا سارا دن ہمیں

    کیسے رہتے چاندنی میں دیر تک

    چیخ گھٹ کر رہ گئی دل میں مگر

    شور گونجا خامشی میں دیر تک

    پھر مجھے آواز دی اک شخص نے

    پھر میں ٹھہرا اس گلی میں دیر تک

    غرق ہو جانے سے پہلے کشتیاں

    لڑکھڑائی تھیں ندی میں دیر تک

    لوگ کیا سمجھیں گے یہ سوچے بغیر

    ہم بھی چلائے خوشی میں دیر تک

    اپنا غم دے کر وہ رخصت ہو گیا

    دل مرا رویا خوشی میں دیر تک

    خود سے ملنے کے جتن میں اے پونؔ

    میں رہا بے ربطگی میں دیر تک

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY