تمہیں اب اس سے زیادہ سزا نہیں دوں گا

لیاقت جعفری

تمہیں اب اس سے زیادہ سزا نہیں دوں گا

لیاقت جعفری

MORE BYلیاقت جعفری

    تمہیں اب اس سے زیادہ سزا نہیں دوں گا

    دعائیں دوں گا مگر بد دعا نہیں دوں گا

    تری طرف سے لڑوں گا میں تیری ہر اک جنگ

    رہوں گا ساتھ مگر حوصلہ نہیں دوں گا

    تری زبان پہ موقوف میرے ہاتھ کا لمس

    نوالہ دوں گا مگر ذائقہ نہیں دوں گا

    میں پہلے بوسہ سے نا آشنا رکھوں گا تمہیں

    پھر اس کے بعد تمہیں دوسرا نہیں دوں گا

    پھر ایک بار گزر جاؤ میرے اوپر سے

    میں اس کے بعد تمہیں راستہ نہیں دوں گا

    کہ تو تلاش کرے اور میں تجھ کو مل جاؤں

    میں تیری آنکھ کو اتنی سزا نہیں دوں گا

    بھگائے رکھوں گا اپنی عدالتوں میں تمہیں

    تمام عمر تمہیں فیصلہ نہیں دوں گا

    میں اس کے ساتھ ہوں جو اٹھ کے پھر کھڑا ہو جائے

    میں تیرے شہر کو اب زلزلہ نہیں دوں گا

    تری انا کے لیے صرف یہ سزا ہے بہت

    تو جا رہا ہے تو تجھ کو صدا نہیں دوں گا

    کہ اب کی بار لیاقتؔ ہوا ہوا سو ہوا

    میں اس کے ہاتھ میں اب آئنا نہیں دوں گا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY