تو مری ابتدا تو مری انتہا میں سمندر ہوں تو ساحلوں کی ہوا

فرحان سالم

تو مری ابتدا تو مری انتہا میں سمندر ہوں تو ساحلوں کی ہوا

فرحان سالم

MORE BY فرحان سالم

    تو مری ابتدا تو مری انتہا میں سمندر ہوں تو ساحلوں کی ہوا

    تیری منزل بنے میرا ہر راستا میں سمندر ہوں تو ساحلوں کی ہوا

    روز و شب موج در موج ہوں در بدر روز و شب ساحلوں پر پٹکتا ہوں سر

    ہاتھ آتا نہیں پھر بھی دامن ترا میں سمندر ہوں تو ساحلوں کی ہوا

    میری شوریدگی کے یہ طوفان سب میری خاموشیوں کے یہ ارمان سب

    کچھ نہیں اک تری آرزو کے سوا میں سمندر ہوں تو ساحلوں کی ہوا

    تو ہی منزل مری تو ہی حد ہے مری تجھ سے وابستگی نامزد ہے مری

    تو نہ ہو گر تو میں خود میں کھو جاؤں گا میں سمندر ہوں تو ساحلوں کی ہوا

    خوشبوؤں سے تری یہ مہکتا سفر یوں ہی جاری رہے گا مرے اوج پر

    تو مسافت مری میں ترا راستا میں سمندر ہوں تو ساحلوں کی ہوا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY