طوفاں سمجھ لیا کبھی ساحل بنا لیا

خالد محمود ذکی

طوفاں سمجھ لیا کبھی ساحل بنا لیا

خالد محمود ذکی

MORE BYخالد محمود ذکی

    طوفاں سمجھ لیا کبھی ساحل بنا لیا

    اے شوق بے اماں تجھے منزل بنا لیا

    اب جسم و جان ناز پہ ٹوٹیں قیامتیں

    اس سے گریز کیا جسے حاصل بنا لیا

    کچھ انتہائے شوق کے تھے سلسلے عجب

    مشکل نہیں تھا جو اسے مشکل بنا لیا

    جس دن کہ انتظار تھا کرنا نہیں کیا

    خود کو مزاج یار کے قابل بنا لیا

    اس راہ پر چلے جو زمانے سے ہٹ کے تھی

    اور کار زندگی تجھے مشکل بنا لیا

    چھوڑا نہیں بنائے بنا ذمہ جو بھی تھا

    پھر بھی نہیں کچھ ایسا کہ بے دل بنا لیا

    جب چاہا اے سمے تجھے رونق سے کاٹ کر

    خلوت نشینی شب محفل بنا لیا

    پانی ہی کیا ہوا بھی نہیں اعتبار کی

    یہ جان کر ٹھکانہ سر گل بنا لیا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے