طور تھا کعبہ تھا دل تھا جلوہ زار یار تھا

فراق گورکھپوری

طور تھا کعبہ تھا دل تھا جلوہ زار یار تھا

فراق گورکھپوری

MORE BYفراق گورکھپوری

    طور تھا کعبہ تھا دل تھا جلوہ زار یار تھا

    عشق سب کچھ تھا مگر پھر عالم اسرار تھا

    نشۂ صد جام کیف انتظار یار تھا

    ہجر میں ٹھہرا ہوا دل ساغر سرشار تھا

    الوداع اے بزم انجم ہجر کی شب الفراق

    تا بہ دور‌ زندگانی انتظار یار تھا

    ایک ادا سے بے نیاز قرب و دوری کر دیا

    ماورائے وصل و ہجراں حسن کا اقرار تھا

    جوہر آئینۂ عالم بنے آنسو مرے

    یوں تو سچ یہ ہے کہ رونا عشق میں بے کار تھا

    شوخئ رفتار وجہ ہستئ برباد تھی

    زندگی کیا تھی غبار رہ گزار یار تھا

    الفت دیرینہ کا جب ذکر اشاروں میں کیا

    مسکرا کر مجھ سے پوچھا تم کو کس سے پیار تھا

    دل دکھے روئے ہیں شاید اس جگہ اے کوئے دوست

    خاک کا اتنا چمک جانا ذرا دشوار تھا

    ذرہ ذرہ آئنہ تھا خود نمائی کا فراقؔ

    سر بسر صحرائے عالم جلوہ زار یار تھا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    طور تھا کعبہ تھا دل تھا جلوہ زار یار تھا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY