ابھرا جو چاند اونگھتی پرچھائیاں ملیں

اطہر عزیز

ابھرا جو چاند اونگھتی پرچھائیاں ملیں

اطہر عزیز

MORE BYاطہر عزیز

    ابھرا جو چاند اونگھتی پرچھائیاں ملیں

    ہر روشنی کی گود میں تنہائیاں ملیں

    شہر وفا میں ہم جو چلے آئے دفعتاً

    ہر ہر قدم پہ درد کی شہنائیاں ملیں

    غنچے ہنسے تو حسن کا کوسوں پتہ نہ تھا

    روٹھی ہوئی کچھ ایسی بھی رعنائیاں ملیں

    ذہن خلش سے دیکھا جو ایوان خواب کو

    خواہش کو پوجتی ہوئی انگنائیاں ملیں

    خوشبو کے ریگ زار میں کیا جانے کیا ملے

    یادوں کے آئنے میں تو انگڑائیاں ملیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY