ادھر وہ بے مروت بے وفا بے رحم قاتل ہے

ولی اللہ محب

ادھر وہ بے مروت بے وفا بے رحم قاتل ہے

ولی اللہ محب

MORE BYولی اللہ محب

    ادھر وہ بے مروت بے وفا بے رحم قاتل ہے

    ادھر بے صبر و بے تسکین و بے طاقت مرا دل ہے

    ادھر صیاد چشم و دام زلف و ناوک مژگاں

    ادھر پہلو میں دل اک صید لاغر نیم بسمل ہے

    ادھر اس کو تو میرے نام سے بھی ننگ ہے ہر دم

    ادھر سینے میں دل مشتاق ہے عاشق ہے مائل ہے

    ادھر وہ خود پرست عیار ہے مغرور ہے خود بیں

    ادھر میرا دل از خود رفتہ ہے شیدائی غافل ہے

    ادھر ہر روز کا اس کو خلاف وعدہ ہے آساں

    ادھر شب تا سحر گہہ انتظاری سخت مشکل ہے

    ادھر خوش سیر دریا سے ہے وہ نا آشنا ظالم

    ادھر ہم غرق بحر غم ہیں اور ناپید ساحل ہے

    ادھر برق نگہ ہے صبر کے خرمن کی آتش زن

    ادھر کشت‌ امید و یاس اب تک سیر حاصل ہے

    ادھر شانے کو اس کے زلف و کاکل نے چڑھایا سر

    ادھر دل پر بلائے آسماں یک دست نازل ہے

    ادھر باقی ہوس ہے بے حساب اس کو جفاؤں کی

    ادھر لکھیے وفاؤں کی تو کچھ اپنا ہی فاضل ہے

    ادھر وہ آئنہ میں عکس رو اپنے کا ہے مائل

    ادھر ہر شے میں وہ ہے جلوہ‌ گر کل و شمائل ہے

    ادھر ہے اختلاط اغیار سے اس یار جانی کا

    ادھر دل ذکر اس کے کا محبؔ دن رات شامل ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY