اجالا دے چراغ رہ گزر آساں نہیں ہوتا

ادا جعفری

اجالا دے چراغ رہ گزر آساں نہیں ہوتا

ادا جعفری

MORE BY ادا جعفری

    اجالا دے چراغ رہ گزر آساں نہیں ہوتا

    ہمیشہ ہو ستارا ہم سفر آساں نہیں ہوتا

    جو آنکھوں اوٹ ہے چہرہ اسی کو دیکھ کر جینا

    یہ سوچا تھا کہ آساں ہے مگر آساں نہیں ہوتا

    بڑے تاباں بڑے روشن ستارے ٹوٹ جاتے ہیں

    سحر کی راہ تکنا تا سحر آساں نہیں ہوتا

    اندھیری کاسنی راتیں یہیں سے ہو کے گزریں گی

    جلا رکھنا کوئی داغ جگر آساں نہیں ہوتا

    کسی درد آشنا لمحے کے نقش پا سجا لینا

    اکیلے گھر کو کہنا اپنا گھر آساں نہیں ہوتا

    جو ٹپکے کاسۂ دل میں تو عالم ہی بدل جائے

    وہ اک آنسو مگر اے چشم تر آساں نہیں ہوتا

    گماں تو کیا یقیں بھی وسوسوں کی زد میں ہوتا ہے

    سمجھنا سنگ در کو سنگ در آساں نہیں ہوتا

    نہ بہلاوا نہ سمجھوتا جدائی سی جدائی ہے

    اداؔ سوچو تو خوشبو کا سفر آساں نہیں ہوتا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites