اس کی نظر کا مجھ پہ کچھ ایسا اثر ہوا

بشیر فاروقی

اس کی نظر کا مجھ پہ کچھ ایسا اثر ہوا

بشیر فاروقی

MORE BYبشیر فاروقی

    اس کی نظر کا مجھ پہ کچھ ایسا اثر ہوا

    دل تھا صدف مثال برنگ گہر ہوا

    وہ شوخیاں تھیں اور نہ وہ رنگ روپ تھا

    کل میں بہت اداس اسے دیکھ کر ہوا

    ایثار اور وفا کی مرے داستاں یہ ہے

    جب بھی وطن پہ وار ہوئے میں سپر ہوا

    وہ حادثہ تو کوئی بڑا حادثہ نہ تھا

    یہ اور بات دل پہ زیادہ اثر ہوا

    ایسا بھی ایک در ہے اسی کائنات میں

    اس در کا جو فقیر ہوا تاجور ہوا

    اب جا کے مجھ کو سرد شبستاں ہوا نصیب

    برسوں تمام جسم پسینے میں تر ہوا

    دہشت زدہ فضاؤں سے وہ بے نیاز تھا

    جب اس کا گھر جلا ہے تو اس پر اثر ہوا

    یاد آ گئی تھی مجھ کو شہید وفا کی پیاس

    دریا کو دیکھ کر جو مرا دل شرر ہوا

    پتھر بھی پھینکتے کوئی آتا نہیں ادھر

    بوڑھے شجر کی طرح جو میں بے ثمر ہوا

    جس دن مری غزل نے چھوئے اس کے لب بشیرؔ

    اس دن مری غزل کا سفر معتبر ہوا

    مآخذ
    • کتاب : Dairon ke darmiyan (Pg. 69)
    • Author : Bashiir Faruqi
    • مطبع : Bashiir Faruqi (2009)
    • اشاعت : 2009

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY