اس کو جو کچھ بھی کہوں اچھا برا کچھ نہ کرے

عابد ملک

اس کو جو کچھ بھی کہوں اچھا برا کچھ نہ کرے

عابد ملک

MORE BYعابد ملک

    اس کو جو کچھ بھی کہوں اچھا برا کچھ نہ کرے

    یار میرا ہے مگر کام مرا کچھ نہ کرے

    کیسے ممکن ہے کہ دل رنج پہ آمادہ ہو

    اور بدلے میں اداسی کا خدا کچھ نہ کرے

    دوسری بار بھی پڑ جوے اگر کچھ کرنا

    آدمی پہلی محبت کے سوا کچھ نہ کرے

    کوئی حیرت کوئی صورت نہیں درکار مجھے

    آئنہ یا تری باتیں کرے یا کچھ نہ کرے

    اکتفا کر لیا بس دیکھتے رہنے پہ تجھے

    ورنہ تو جس کا مقدر ہو وہ کیا کچھ نہ کرے

    لوگ ایسے ہیں کہ جو دل سے تسلی بھی نہ دیں

    وقت ایسا ہے کہ جب کوئی دعا کچھ نہ کرے

    چھوڑ کر اپنے خدا کو ترے پاس آیا ہوں

    اور اگر تو بھی مرے مسئلے کا کچھ نہ کرے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY