اسے تو کھو ہی چکے پھر خیال کیا اس کا

خالد شریف

اسے تو کھو ہی چکے پھر خیال کیا اس کا

خالد شریف

MORE BYخالد شریف

    اسے تو کھو ہی چکے پھر خیال کیا اس کا

    یہ فکر کیسی کہ پھر ہوگا حال کیا اس کا

    وہ ایک شخص جسے خود ہی چھوڑ بیٹھے ہیں

    گھلائے دیتا ہے دل کو ملال کیا اس کا

    تمہاری آنکھوں میں چھلکیں ندامتیں کیسے

    جواب بننے لگا کیا سوال کیا اس کا

    وہ نفرتوں کے بھنور میں بھی مسکرا کے ملا

    اب اس سے بڑھ کے بھلا ہو کمال کیا اس کا

    اسے تو جاں سے بھی اپنی عزیز تر رکھئے

    جو زخم خود ہی لگے اندمال کیا اس کا

    اب اس طرح بھی نہ یادوں کی کرچیاں چنئے

    نہ تھا فراق سے بہتر وصال کیا اس کا

    یہ سوچ کر نہ اسے پھر کبھی ملے خالدؔ

    کہ جانے ہوگا ندامت سے حال کیا اس کا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY