اسے یہ حق ہے کہ وہ مجھ سے اختلاف کرے

اعجاز رحمانی

اسے یہ حق ہے کہ وہ مجھ سے اختلاف کرے

اعجاز رحمانی

MORE BYاعجاز رحمانی

    اسے یہ حق ہے کہ وہ مجھ سے اختلاف کرے

    مگر وجود کا میرے بھی اعتراف کرے

    اسے تو اپنی بھی صورت نظر نہیں آتی

    وہ اپنے شیشۂ دل کی تو گرد صاف کرے

    کیا جو اس نے مرے ساتھ نا مناسب تھا

    معاف کر دیا میں نے خدا معاف کرے

    وہ شخص جو کسی مسجد میں جا نہیں سکتا

    تو اپنے گھر میں ہی کچھ روز اعتکاف کرے

    وہ آدمی تو نہیں ہے سیاہ پتھر ہے

    جو چاہتا ہے کہ دنیا مرا طواف کرے

    وہ کوہ کن ہے نہ ہے اس کے ہاتھ میں تیشہ

    مگر زبان سے جب چاہے وہ شگاف کرے

    میں اس کے سارے نقائص اسے بتا دوں گا

    انا کا اپنے بدن سے جدا غلاف کرے

    جسے بھی دیکھیے پتھر اٹھائے پھرتا ہے

    کوئی تو ہو مری وحشت کا اعتراف کرے

    میں اس کی بات کا کیسے یقیں کروں اعجازؔ

    جو شخص اپنے اصولوں سے انحراف کرے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے