وعدہ اس ماہرو کے آنے کا

اختر شیرانی

وعدہ اس ماہرو کے آنے کا

اختر شیرانی

MORE BYاختر شیرانی

    وعدہ اس ماہرو کے آنے کا

    یہ نصیبہ سیاہ خانے کا

    کہہ رہی ہے نگاہ دز دیدہ

    رخ بدلنے کو ہے زمانے کا

    ذرے ذرے میں بے حجاب ہیں وہ

    جن کو دعوی ہے منہ چھپانے کا

    حاصل عمر ہے شباب مگر

    اک یہی وقت ہے گنوانے کا

    چاندنی خامشی اور آخر شب

    آ کہ ہے وقت دل لگانے کا

    ہے قیامت ترے شباب کا رنگ

    رنگ بدلے گا پھر زمانے کا

    تیری آنکھوں کی ہو نہ ہو تقصیر

    نام رسوا شراب خانے کا

    رہ گئے بن کے ہم سراپا غم

    یہ نتیجہ ہے دل لگانے کا

    جس کا ہر لفظ ہے سراپا غم

    میں ہوں عنوان اس فسانے کا

    اس کی بدلی ہوئی نظر توبہ

    یوں بدلتا ہے رخ زمانے کا

    دیکھتے ہیں ہمیں وہ چھپ چھپ کر

    پردہ رہ جائے منہ چھپانے کا

    کر دیا خوگر ستم اخترؔ

    ہم پہ احسان ہے زمانے کا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY