وعدے کی جو ساعت دم کشتن ہے ہمارا

مومن خاں مومن

وعدے کی جو ساعت دم کشتن ہے ہمارا

مومن خاں مومن

MORE BYمومن خاں مومن

    وعدے کی جو ساعت دم کشتن ہے ہمارا

    جو دوست ہمارا ہے سو دشمن ہے ہمارا

    یہ کاہ ربا سے بھی ہیں کم اے کشش دل

    مذکور کچھ ایسا پس چلمن ہے ہمارا

    افسوس موئے شمع شب وصل کی مانند

    جو قہقہہ شادی ہے سو شیون ہے ہمارا

    مہتاب کا کیا رنگ کیا دود فغاں نے

    احوال شب تار سے روشن ہے ہمارا

    دیتا نہیں اس ضعف پہ بھی جوش جنوں چین

    ہر ریگ رواں دشت میں توسن ہے ہمارا

    تفریح نہ کیونکر ہو ہوا آ نہیں سکتی

    گویا در و دیوار نشیمن ہے ہمارا

    گر پاس ہے لوگوں کا تو آ جا کہ قلق سے

    ہے لاش کہیں اور کہیں مدفن ہے ہمارا

    جذب دل اسے کھینچ کے لائے تو کہاں لائے

    جو غیر کا گھر ہے وہی مسکن ہے ہمارا

    بت خانے سے کعبے کو چلے رشک کے مارے

    مومنؔ خضر راہ برہمن ہے ہمارا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY