وادیٔ کن سے غم مرحلہ پیما نکلا

کوثر جائسی

وادیٔ کن سے غم مرحلہ پیما نکلا

کوثر جائسی

MORE BYکوثر جائسی

    وادیٔ کن سے غم مرحلہ پیما نکلا

    میری کشتی کو لیے وقت کا دریا نکلا

    پائے ادراک میں چبھتا ہوا کانٹا نکلا

    عشق کے دام میں خود اپنا سراپا نکلا

    محنت اہل وفا آ ہی گئی کام آخر

    ہر شگاف غم ہستی سے سویرا نکلا

    عقل کو ناز تھا حد بندیٔ خیر و شر پر

    دل نے جانچا تو ہر اک کام ادھورا نکلا

    اس سے ملنے کی فضا صاف نہیں تھی کوئی

    ہر گزر گاہ پہ احساس کا پہرا نکلا

    تشنگی میں نے بجھا لی یہ ہنر تھا ورنہ

    خضر کا دل بھی رہ عمر میں پیاسا نکلا

    خواب دیکھا تھا کہاں چمکی ہے تعبیر کہاں

    حشر کا دن مری فطرت کا اجالا نکلا

    موت کی حد میں بھی مجھ کو نہ دیا اذن قیام

    سخت مشکل تری نظروں کا تقاضا نکلا

    موجۂ نکہت گیسو جسے سمجھا میں نے

    وہ بھی میرے نفس سرد کا جھونکا نکلا

    میں تہی دست ہوں بازار وفا میں کوثرؔ

    سکہ سکہ زر امید کا کھوٹا نکلا

    مأخذ :
    • کتاب : Nishat-e-Fikr (Pg. 121)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY