وہ قضا کے رنج میں جان دیں کہ نماز جن کی قضا ہوئی

مضطر خیرآبادی

وہ قضا کے رنج میں جان دیں کہ نماز جن کی قضا ہوئی

مضطر خیرآبادی

MORE BYمضطر خیرآبادی

    وہ قضا کے رنج میں جان دیں کہ نماز جن کی قضا ہوئی

    ترے مست بادۂ شوق نے نہ کبھی پڑھی نہ ادا ہوئی

    ترے دور دورۂ عشق میں مری ایک رنگ سے کٹ گئی

    نہ ستم ہوا نہ کرم ہوا نہ جفا ہوئی نہ وفا ہوئی

    مجھے غیر عجز و نیاز نے ترے در پہ جا کے جھکا دیا

    نہ تو کوئی عہد لکھا گیا نہ تو کوئی رسم ادا ہوئی

    مرا دل بھی تھا مری جاں بھی تھی نہ وہی رہا نہ یہی رہی

    مجھے کیا خبر کہ وہ کیا ہوا مجھے کیا خبر کہ یہ کیا ہوئی

    مری عمر مضطرؔ خستہ دل کٹی رنج و درد و فراق میں

    نہ کسی سے میری دوا ہوئی نہ دوا سے مجھ کو شفا ہوئی

    مأخذ :
    • کتاب : Khirman (Part-1) (Pg. 380)
    • Author : Muztar Khairabadi
    • مطبع : Javed Akhtar (2015)
    • اشاعت : 2015

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY